چپکے چپکے رات دن آنسو بہانا یاد ہے​
ہم کو اب تک عاشقی کا وہ زمانہ یاد ہے​

با ہزاراں اضطراب و صد ہزاراں اشتیاق​
تجھ سے وہ پہلے پہل دل کا لگانا یاد ہے​

بار بار اُٹھنا اسی جانب نگاہ ِ شوق کا ​
اور ترا غرفے سے وُہ آنکھیں لڑانا یاد ہے​

تجھ سے کچھ ملتے ہی وہ بے باک ہو جانا مرا ​
اور ترا دانتوں میں وہ انگلی دبانا یاد ہے​

کھینچ لینا وہ مرا پردے کا کونا دفعتاً​
اور دوپٹے سے ترا وہ منہ چھپانا یاد ہے​

جان کرسونا تجھے وہ قصد ِ پا بوسی مرا ​
اور ترا ٹھکرا کے سر، وہ مسکرانا یاد ہے​

تجھ کو جب تنہا کبھی پانا تو ازراہِ لحاظ​
حال ِ دل باتوں ہی باتوں میں جتانا یاد ہے​

جب سوا میرے تمہارا کوئی دیوانہ نہ تھا​
سچ کہو کچھ تم کو بھی وہ کارخانا یاد ہے​

غیر کی نظروں سے بچ کر سب کی مرضی کے خلاف​
وہ ترا چوری چھپے راتوں کو آنا یاد ہے​

آ گیا گر وصل کی شب بھی کہیں ذکر ِ فراق​
وہ ترا رو رو کے مجھ کو بھی رُلانا یاد ہے​

دوپہر کی دھوپ میں میرے بُلانے کے لیے​
وہ ترا کوٹھے پہ ننگے پاؤں آنا یاد ہے​

آج تک نظروں میں ہے وہ صحبتِ راز و نیاز​
اپنا جانا یاد ہے،تیرا بلانا یاد ہے​

میٹھی میٹھی چھیڑ کر باتیں نرالی پیار کی​
ذکر دشمن کا وہ باتوں میں اڑانا یاد ہے​

دیکھنا مجھ کو جو برگشتہ تو سو سو ناز سے​
جب منا لینا تو پھر خود روٹھ جانا یاد ہے​

چوری چوری ہم سے تم آ کر ملے تھے جس جگہ​
مدتیں گزریں،پر اب تک وہ ٹھکانہ یاد ہے​

شوق میں مہندی کے وہ بے دست و پا ہونا ترا​
اور مِرا وہ چھیڑنا، گُدگدانا یاد ہے​

با وجودِ ادعائے اتّقا حسرت مجھے​
آج تک عہدِ ہوس کا وہ فسانا یاد ہے

حسرت موہانی

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here